Golden Words

Soch badlny wali Batain

Soch badlny wali Batain

جو ذہن اپنی لذتوں کا غلام اور روح  
اپنی خواہشوں کی قیدی ہو تی ہے
وہ ایک بنجر زمین کی مانند ہے

jo zahan apni lizatun ka ghulam,aur roh apni khwaheshun ki qeedi hoti hai ,wo aik banjar zameen ki maanind hai

آپ کبھی بھی لوگوں کی سوچ کو اپنے
بارے میں تبدیل نہیں کر سکتے
اسلیئے لوگوں کی پرواہ کئے بغیر اپنی زندگی
اس طریقے سے بسر کیجئے جو آپ کو خوشی دے

aap kabhi bhi logon ki soch ko apny baary main tabdeel nahi kar sakty ,ic leye logon ki parwah keye bagher apni zindagi ic tareky say basar ke jeye ju aap ko khushi day

Soch badlny wali Batain

انسان کی زندگی تو اس قدر مختصر ہے کہ
وہ محبت کا حق بھی ادا نہیں کر سکتا
پھر نہ جانے لوگ نفرت کیلئے
وقت کہاں سے نکال لیتے ہیں

insaan ki zindagi tu ic qadar mukhtasir hai ,wo muhabat ka hak bhi ada nahi kar sakta,phir na jany logon ki nafrat ke leye waqat,kahan say nikal leta hai

Soch badlny wali Batain

اُمیدوں کے آگے ٹوٹ جانا اچھا نہیں لگتا
کسی کے آگے ہاتھ پھیلانا اچھا نہیں لگتا
مجھے دینے والوں کی ہی قطار میں رکھنا میرے مالک
تیرے در کے سوا کہیں سر جھکانا اچھا نہیں لگتا

umedon k aagy Toot jana acha nahi lagta ,kesi aagy hath phelana acha nahi lagta,mujhy deny walon ki hi qitaar main rakhna mary mola,tery dar k ilawa kahi sar jhukana acha nahi lagta

Soch badlny wali Batain

اگر گرنا ہی آپ کی فطرت ٹھہرا تو کوشش کریں
پہاڑ سے گریں ،نظروں سے نہیں

Agar girna hi aap ki fitrat tahra tu koshesh karain ,pahar say girain nazrun say nahi

انسان نہ کچھ ہنس کر سیکھتا ہے
اور نہ رو کر سیکھتا ہے
وہ جب بھی کچھ سیکھتا ہے
یا تو کسی کا ہو کر سیکھتا ہے
یا پھر کسی کو کھو کر سیکھتا ہے

insaan na kuch hans kar sekhta hai,na ro kar sekhta hai,ya tu kesi ka ho kar sekhta hai,ya phir kesi ko kho kar sekhta hai

جب اندھیرا بڑھنے لگے
 تو کسی پیاسے دیئے
میں چپکے سے تیل بھر دیا کرو
دیکھنا پھر تمہاری ذات کی روشنی
کبھی کم نہیں ہو گی

Jab andhera barhny lagy,tu kesi pyasy deye mein chupky say teel bhar dia karo,dekhna phir tumhari zaat ki roshni kabhi kam nahi ho gi

زندگی نے بہت کچھ سکھایا کتابوں نے بھی رہنمائی کی
لیکن انسانی رویوں نے جو سبق دیا
نہ تو وہ زندگی کے کسی ورق اور نہ ہی
کتاب کے کسی صفحے پر تحریر تھا

Zindagi nay buhat kuch sekhaya ,kitabun nay bhi rahnamai ki,laikn insaani rawayon nay jo sabak dia,na tu wo zindagi k kesi warak aur na hi kitaab k kesi safy par tahreer tha

زندگی میں خوشیاں حاصل کرنا چاہتے ہو تو
خوشیاں دینا بھی سیکھو
جب دینا سیکھ جاؤ گے تو پانا آسان ہو جائے گا

Zindagi main khushyan hasil karna chahty hu tu,khushyan dena bhi sekho ,jab dena sekh jao gay tab pana bhi aasan hu jaye ga

انسان جب پیدا ہوتا ہے تو خدا اُس کی فطرت میں
محبت اور خلوص کو بھی ساتھ پیدا کرتا ہے
نفرت اور پتھر دل بننا انسان کو انسان سکھاتے ہیں

insaan jab peda hota hai,tu Khuda uc ki fitrat main Muhabat aur Khalus ko bhi sath peda karta hai,Nafrat aur pathar dil bn’na insaan ko insaan sikhaty hain

25سال کی عمر  تک ہمیں پرواہ نہیں ہوتی کہ
لوگ کیا سوچیں گے 50سال کی عمر تک اسی ڈر میں جیتے ہیں
کہ لوگ کیا سوچیں گے
50سال کے بعد پتہ چلتا ہے کہ
ہمارے بارے میں کوئی سوچ ہی نہیں رہا تھا

Saal ki umar tak hamain parwah nahi hoti keh 25 log kia sochain gay,50 saal k baad pta chlta hai keh koi bhi hamary bary main soch nahi raha tha

جب زندگی آپ کو اُداس ہونے کی 100 وجوہات پیش کرے
تو آپ زندگی کو بتائیں کہ آپ کے پاس
مسکرانے کے ہزار موقعے ہیں

jab zindagi Aap ko udas hony ki 100 wajuhat pesh kary tu aap zindagi ko batayen keh Aap k pas muskarany k hazar hoqy hain

dukh ki ginti jan’nt hun main,sukh gin’na na aawy ,main na shukra mery malik,aik tufeeq dila day ,sukh gin’na sikhla day

دُکھ کی گنتی جانت ہوں میں ،سُکھ گننا نہ آوے
میں ناشکرا میرے مالک،اک توفیق دلا دے
سُکھ گننا سکھلا دے

محبت ، دوستی،ہمدردی،رہنمائی یا مدد
اس دُنیا میں کوئی اسی نشانی ضروری چھوڑ جائیں
جو یہ بتاتی رہے کہ اس راہ سے آپ گزرے تھے

Muhabat ,dosti,hamdardi ya rahnamai ya madad ic dunya main koi esi nishani zaroor chor jayen jo ye batati rahy keh ic rah say aap say aap guzry thy

اس دُنیا میں ہمارا اپنا صرف وقت ہے
اگر وہ صحیح ہے تو سب اپنے ورنہ
کوئی بھی اپنا نہیں

ic dunya main hamara siraf apna waqat hai,agar wo sahi hai tu sab apny warna koi bhi apna nahi

اچھے لوگوں کے درمیان دوستی جلدی قائم ہو جاتی ہے
اور ٹوٹتی دیرسے ہے
اس کی مثال سونے کی پیالے جیسی ہے

Achy logon k darmyan jaldi qaiem ho jati hai,aur toti dair say hai,ic ki misaal sony k pyaly jesi hai

Related Articles

Check Also
Close
Back to top button