aqwal e zareen

Aqwal Zareen in urdu

جذبات کے سمندر کا ٹھنڈا سا نس آسمان کا آنسو روح کا سبزہ اور    راز  کا تبسم ہے

Jazbat k samandar ka Thanda saans Aasman ka Anso Roh ka sabza aur Raaz ka tabsum hai

کبھی کبھی اُن سے ملنا پڑتا ہے جس سے آپ ملنا نہیں چاہتے اور کبھی کبھی اُن سے بچھڑ   نا پڑتا ہے جن سے آپ بچھڑنا نہیں چاہتے

Kabhi kabhi un say milna parta hai jis say Aap milna nahi chahty aur kabhi kabhi in sy Bicharna parta hai Jin say Aap bicharna nahi chahty

محبت سب سے کرو لیکن اس سے اور بھی زیادہ کرو جس کے دل میں تمہارے لئے تم سے بھی زیادہ محبت ہے

Muhabat sab say karo laikin ic say aur bhi zayada karo jis k dil main tumhary lye tum say zayada Muhabat ho

جب ہمارے احساس کو بہت بُری طرح روندھا جاتا ہے تو پھر کسی سے احساس کا رشتہ جوڑنے کا دل نہیں کرتا

Jab hamary Ahsas ko buhat buri tarah Rondha jata hai tu phir kesi say Ahsas ka rishta Jorany ka dil nahi karta

خوشی تو دھوکہ ہوتی ہے تتلی سے بھی ہلکے پر ہوتے ہیں پُھر سے اڑ جاتی ہے اور غم تو پہاڑ ہوتا ہے جہاں تخلیق ہوا وہاں جم گیا

Khushi tu dhoka hoti hai tetli say bhi halky par hoty hain phur say ur jati hai,aur gham to pahar hota hai jahan takhleq howa waha jam gia

طاقت یہ ہے  کہ انسان آنسو بہانے کی بے شمار وجوہات ہونے کے باوجود مسکرانے کو ترجیح دے 

Taqat ye hai k insaan anso bahany k be shumar wajuhat hony k bawajod bhi muskarany kotarje day

اپنی تقدیر میں تو کچھ ایسے ہی سلسلے لکھے ہیں کسی نے بھول کر اپنا لیا کوئی اپنا کر بھول گیا

Apni tadeer main tu kuch aesy hi silsaly likhy hain ksi ny bhol kar apna lia koi apna kar bhol gia

اجڑ جاتے ہیں سر سے پاؤں تک وہ لوگ جو کسی خود غرض پہ خود سے زیادہ مرتے ہیں

ujar jaaty hain sar say paon tak wo log jo kesi Khud Gharaz par khud say zayada marty hain

جو  لوگ آپ کے ہیں   وہ ہر  حال  میں آپ کے ہی رہیں گے جنہوں نے جانا ہوتا ہے وہ بے وجہ بھی چلے جاتے ہیں جنہوں نے نبھاناہوتا ہے وہ بے وجہ بھی نبھالیتے ہیں

Jo log aap k hain har haal main Aap k hi rahain gay jinhun nay jana hota hai wo be waja bhi chaly jaty hain jinhun nay nubhana hota hai wo by waja bhi nibha lety hain

کسی کی ناراضگی کو اتنا طول نہ دو کہ اُسے تمہارے بغیر جینے کی عادت ہو جائے

kesi ki narazgi ko itna tool na du ke usy tumhary bagher jeeny ki addat hojaye

Related Articles

Check Also
Close
Back to top button